لیب میں تیار کردہ چکن ’محفوظ‘ قرار: ’یہ خوراک کی صنعت کے لیے تاریخی فیصلہ ہے‘ BBC Urdu

Getty Imagesامریکہ میں لیبارٹری میں تیار کیے گئے گوشت کے ایک پراڈکٹ کو انسانی خوراک کے اعتبار سے محفوظ قرار دیا گیا ہے۔ امریکی ادارے فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن (ایف ڈی اے) نے سیل کلچرڈ چکن کو ’محتاط معائنے‘ کے بعد منظوری دی ہے۔ اس چکن کو سٹیل کے ڈبوں میں اپ سائیڈ فوڈز نامی ایک کمپنی نے تیار کیا ہے۔ اسے بنانے کے لیے زندہ جانوروں کی خلیات استعمال کر کے اس کی لیب میں افزائش کی گئی۔امریکی محکمۂ زراعت کے ایک جائزے کے بعد اس پراڈکٹ کو فروخت کیا جاسکے گا۔ ایف ڈی اے نے کہا ہے کہ اس نے یہ فیصلہ کمپنی کی فراہم کردہ معلومات اور ڈیٹا کی بنیاد پر کیا ہے اور فی الحال اس بارے میں کوئی سوالات نہیں۔ کمپنی کے سربراہ اوما ولیتی نے کہا ہے کہ ’ہم نے اپ سائیڈ فوڈز ایسے وقت میں شروع کیا جب بہت سے لوگوں کو اس پر اعتراض تھا۔ آج ہمیں اپنے کلٹیویٹڈ میٹ (اُگائے گئے گوشت) پر ایف ڈی اے کی منظوری ملی ہے۔‘تاہم اپ سائیڈ فوڈز کو اپنی اشیا فروخت کرنے سے قبل کئی رکاوٹوں سے گزرنا ہوگا۔ مثلاً وہ مقام جہاں یہ کھانا تیار کیا جاتا ہے، اسے اجازت نامہ درکار ہوگا لیکن ولیتی نے کہا کہ ایف ڈی اے کی منظوری اشیا خورد و نوش کی صنعت کے لیے ’ایک تاریخی لمحہ ہے۔‘ یہ بھی پڑھیےکیا آپ لیبارٹری میں تیار کردہ گوشت کھائیں گے؟برائلر مرغی کو 50 سال میں 400 فیصد بڑا کیسے کیا گیا؟کیا خلا میں گوشت ’اگایا‘ جا سکتا ہے؟ https://twitter.com/UmaValeti/status/1592947532841504768لیب میں تیار کیے گئے گوشت کی صنعت میں بڑھتی دلچسپیکئی سٹارٹ اپ کمپنیاں ایسے ہی پراڈکٹ تیار کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ ان کا دعویٰ ہے کہ اس طرح خوراک کی تیاری میں کاربن اخراج میں کمی اور پانی بچایا جاسکے گا۔ اس سے قدرتی عمل کے لیے جگہ بھی چھوڑی جاسکے گی۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ عام یورپی خوراک کے مقابلے ایسی خوراک کی تیاری سے زمین پر 80 فیصد سے زیادہ دباؤ کم کیا جاسکے گا۔ یہ پیشگوئیاں کی جا رہی ہیں کہ کلچرڈ میٹ کی اشیا مستقبل میں گوشت کی مجموعی فروخت میں بڑی جگہ بنا لیں گی۔ سنگاپور میں اسی طرح کی ایک کمپنی ایٹ جسٹ کو 2020 کے دوران اس کے مصنوعی ’کلین میٹ‘ کے لیے منظوری ملی تھی۔ اس کے بنائے گئے نگٹس لیب میں تیار کیے جاتے ہیں اور اس کے لیے جانور کے پٹھوں کی خلیات استعمال ہوتی ہیں۔ اسرائیل میں قائم فیوچر میٹ ٹیکنالوجیز اور امپاسیبل فوڈز اس شعبے میں دو سب سے بڑی کمپنیوں میں سے ہیں۔ سال 2016 میں امپاسیبل فوڈز کا برگر متعارف کرایا گیا تھا اور اس کی مقبولیت میں اضافہ ہوا ہے۔ اس کے نتیجے میں کمپنی کا فاسٹ فوڈ چین برگر کنگ سے معاہدہ ہوا اور امریکہ میں اس کے مینیو میں اب ووپرز نامی برگر فروخت کیا جاتا ہے۔سکاٹ لینڈ میں قائم فوڈ ٹیک کمپنی راسلن ٹیکنالوجیز کے سربراہ ارنیسٹ وان اورسو نے ایف ڈی اے کی منظوری کو تاریخی لمحہ قرار دیا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ ’یہ دلچسپ ہے کہ عالمی نگراں اب اس نتیجے پر پہنچ رہے ہیں کہ لیب میں تیار کیا گیا کلچرڈ گوشت انسانوں کے کھانے کے لیے محفوظ ہے۔‘ان کے مطابق ایف ڈی اے نے اس منظوری کے لیے سائنس، سہولت اور خطرات پر مبنی جائزہ لیا ہے تاکہ خوراک کی صنعت میں اس نئی چیز کی نگرانی کی جاسکے۔ وہ کہتے ہیں کہ اس قدم سے کلچرڈ فوڈ انڈسٹری میں ’سرمایہ کاری اور جدت میں اضافہ ہوگا۔‘

Post Your Comments

Disclaimer: All material on this website is provided for your information only and may not be construed as medical advice or instruction. No action or inaction should be taken based solely on the contents of this information; instead, readers should consult appropriate health professionals on any matter relating to their health and well-being. The data information and opinions expressed here are believed to be accurate, which is gathered from different sources but might have some errors. Hamariweb.com is not responsible for errors or omissions. Doctors and Hospital officials are not necessarily required to respond or go through this page.