کیا آپ مرچوں میں چھپے صحت کے راز جانتے ہے؟ Daily Ausaf

ملتان (نیوز ڈیسک )مرچوں کو اکثر تیزی اور تیکھے پن سے جانا جاتا ہے جو کھانوں میں خوشبو اور ذائقے کے لئے استعمال کی جاتی ہے لیکن بہت کم لوگ اسکی اصل افادیت سے واقف ہیں۔مرچ عام طور پر گرم ممالک مثلًا پاکستان اور ہندوستان میں زیادہ کاشت کی جاتی ہے اور اسکا استعمال بھی ان ممالک میں زیادہ ہے۔مرچ وٹامن کے، ای، سی، وٹامن بی کمپلیکس، کیلشیم، پوٹاشیم اور غذائی فائبر حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ ہیں۔مرچ کے چند بہترین فوائد درجہ ذیل ہیں۔1معدے کے لئے:۔کھانوں میں ہری مرچوں کا استعمال معدے کے درد گیس اور مروڑ کے لیے انتہائی مفید ہے قدیم زمانے میں عملِ انہضام کو بہتر بنانے کے لئے مرچ کے استعمال کی تجویز دی جاتی تھی یہ معدے سے نکلنے والی فاصل مواد کے اخراج کے عمل کو بہتر بناتی ہے اسکے علاوہ کھانا ہضم کرنے اور بھوک بڑھانے کے لئے بھی اسکا استعمال نہایت مؤثر ثابت ہوا ہے۔2نزلہ و زکام :۔نزلہ و زکام میں مرچوں کا استعمال نہایت فائدے مند ہے مرچیں ناک اور گلے سے نکلنے والی رطوبت کے عمل کو تیز کرتا ہے جس سے سانس کی نالی صاف ہو جاتی ہے اور سانس لینے میں دوشواری کا سامنا نہیں کرنا پڑتا ۔ --> 3خون کا بہاؤ:۔بیماری کی صورت میں بیماری کا اثر خون کے بہاؤ پر بھی اثر انداز ہوتا ہے مرچوں کا روزانہ استعمال خون کے بہاؤ میں تیزی لاتا ہے مرچوں میں موجود کیلشیم اور آئرن بلڈ پریشر کو بہتر طریقے سے کنٹرول کرنے میں مدد فراہم کرتے ہیں۔4دل کے امراض:۔تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کے مرچوں کا استعمال ہارٹ اٹیک سے محفوظ رکھتا ہے مرچیں خون میں کولیسٹرول کو کم کرتی ہیں اور مدافعتی نظام کو بہتر بناتی ہیں ۔5وزن کم کرنے کے لئے:۔مرچوں میں چکنائی موجود نہیں ہوتی بلکے مرچوں میں چربی اور حراروں کو جلانے کی خاص صلاحیت موجود ہوتی ہے۔ مرچوں کا استعمال نظام انہضام کے کام کرنے کی صلاحیتوں میں پچیس فیصد تک اضافہ کرتا ہے 6 گرام مرچ کا استعمال جسم میں 76 سے زائد حراروں کو جلانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔6احتیاط:۔مرچوں کا لمبے عرصے تک استعمال صحت مندانہ عمل نہیں ہے اس لئے اسکا استعمال ایک حد تک کریں۔

Post Your Comments

Disclaimer: All material on this website is provided for your information only and may not be construed as medical advice or instruction. No action or inaction should be taken based solely on the contents of this information; instead, readers should consult appropriate health professionals on any matter relating to their health and well-being. The data information and opinions expressed here are believed to be accurate, which is gathered from different sources but might have some errors. Hamariweb.com is not responsible for errors or omissions. Doctors and Hospital officials are not necessarily required to respond or go through this page.