5 سال سے کم عمر کے بچوں کی اموات کی بڑی وجہ نمونیہ ہے Daily Ausaf

اسلام آباد(نیو زڈیسک)ماہر امراض کا کہنا ہے کہ پاکستان میں 5 سال سے کم عمر کے بچوں کی99 فی صد اموات نمونیہ سے ہوتی ہیں۔ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے اوجھا انسٹیٹیوٹ آف چیسٹ ڈیزیز کے زیر اہتمام منعقدہ سیمینار سے خطاب کے دوران ماہر امراض سینہ نے کہا ہے کہ پاکستان میں 5 سال سے کم عمر کے بچوں کی99 فی صد اموات نمونیہ سے ہوتی ہیں جب کہ ملک میں ایک کروڑ افراد سالانہ نمونیہ سے متاثر ہوتے ہیں۔ بھارت، چین، انڈونیشیا، بنگلہ دیش اور پاکستان ان ممالک میں شامل ہیں جہاں نمونیہ سے ہونے والی اموات کی شرح سب سے زیادہ ہے جبکہ دنیا بھر میں ہرسال 9 لاکھ 20 ہزار افراد نمونیہ سے مرجاتے ہیں۔انسٹی ٹیوٹ کے سربراہ پروفیسرڈاکٹر نثار راؤ، ڈاکٹر ندیم احمد، ڈاکٹر عائشہ وجیہہ، ڈاکٹر فہیم، ڈاکٹر راحیلہ کاشف، ڈاکٹر فرزانہ ممتاز اور ڈاکٹر مرزا سیف اللہ بیگ کا کہنا تھاکہ نمونیہ سے ہونے والی99 فیصد اموات کا تعلق ترقی پذیر ممالک سے ہوتا ہے،نمونیہ کی کئی وجوہ ہیں جن وائرس، بیکٹریا اور فنگس شامل ہیں، اسی طرح دیگر اہم وجوہ میں اسٹریپ ٹوکوکس نمونیہ، انفلوئنزا ٹائپ بی بھی شامل ہیں۔

Post Your Comments

Disclaimer: All material on this website is provided for your information only and may not be construed as medical advice or instruction. No action or inaction should be taken based solely on the contents of this information; instead, readers should consult appropriate health professionals on any matter relating to their health and well-being. The data information and opinions expressed here are believed to be accurate, which is gathered from different sources but might have some errors. Hamariweb.com is not responsible for errors or omissions. Doctors and Hospital officials are not necessarily required to respond or go through this page.