Find a Doctor Find a Hospital
پیٹ کے مسائل سے بچنا بہت آسان Neo
اسلام آباد:حالیہ دور میں غیر معیاری اشیا، مصروف زندگی ، اور کھانے پینے میں احتیاط نہ کرنے والوں کو اکثر پیٹ کے مسائل سے دوچار ہونا پڑتا ہے ۔ایسے میں اکثر پیٹ کا پھول جانا یا گیس ہوجانا بہت عام ہے جو کہ کافی تکلیف کا باعث بھی ہوتا ہے۔ ایسا ہونے کی صورت میں جسمانی طو پر بھی سستی محسوس ہوتی ہے مگر اس سے بچنا بہت آسان ہے۔ بس آپ کو چند عام چیزوں کو ہی اپنانا ہوگا۔ کیسٹر آئل کیسٹر آئل کو گرم کرکے پیٹ پر اس کی مالش کریں، اس سے جسم کو اضافی چربی گھلانے اور پیٹ کو کم کرنے میں مدد ملے گی اور اس طرح پیٹ پھولنے اور گیس پیدا ہونے کا مسئلہ بھی حل ہوجائے گا۔ سبز چائے چائے خاص طور پر سبز چائے نظام ہاضمہ کو صاف کرنے، میٹابولزم کو بہتر بنانے اور پیٹ پھولنے کو کم کرتی ہے، جبکہ سبز چائے ایک ایسا مشروب ہے جس کا زیادہ استعمال کسی قسم کے مضر اثرات کا باعث بھی نہیں بنتا۔ بہتر نیند اگر تو آپ کم سونے کے عادی ہیں تو پیٹ پھولنا اور گیس پیدا ہونے کے لیے تیار رہنا چاہیئے، تاہم 7 سے 9 گھنٹے کی نیند سے آنتوں کا نظام بہتر اور قبض کا مسئلہ ختم ہوجاتا ہے، جس سے پیٹ پھولنے اور گیس کی شکایت بھی کم ہوجاتی ہے۔ چیونگم سے دوری اگر تو آپ مسلسل چیونگم چبانے کے عادی ہیں اور اس کے ساتھ ساتھ ٹافیاں چوسنے اور کولڈ ڈرنکس کو پسند کرتے ہیں تو پیٹ میں ہوا بھر جانا لازمی ہوجاتا ہے۔ یہ ہوا معدے میں پھنس جاتی ہے جس کے نتیجے میں پیٹ پھولتا ہے یا گیس کی شکایت ہوجاتی ہے، تو ان عادات سے دوری اس تکلیف سے بچاؤ کے لیے ضروری ہے۔ کم غذا کا استعمال جب آپ زیادہ کھانا کھاتے ہیں تو اسے ہضم ہونے میں بھی وقت لگتا ہے، یہ ہضم نہ ہونے والا کھانا آنتوں میں گیس کا باعث بنتا ہے اور یہی مسئلہ آگے بڑھ کر آنتوں اور معدے کو پھلا دیتا ہے، لہذا کم مقدار میں کھانا بہترین حکمت عملی ہے۔ مخصوص غذاؤں کا کم استعمال سفید ڈبل روٹی، سفید چاول، بسکٹ، کیک، ٹافیاں اور گوبھی وغیرہ پیٹ میں گیس پیدا کرتے ییں، لہذا ان کا استعمال کبھی کبھار کریں تاکہ اس تکلیف سے بچا جاسکے۔
More News View all
Comments
Post Your Comments
Disclaimer: All material on this website is provided for your information only and may not be construed as medical advice or instruction. No action or inaction should be taken based solely on the contents of this information; instead, readers should consult appropriate health professionals on any matter relating to their health and well-being. The data information and opinions expressed here are believed to be accurate, which is gathered from different sources but might have some errors. Hamariweb.com is not responsible for errors or omissions. Doctors and Hospital officials are not necessarily required to respond or go through this page.
MORE DOCTORS